Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Tu Nahi Tu Ab Fikar Kesi by Atia Rani

Tu Nahi Tu Ab Fikar Kesi by Atia Rani


Urdu poetry is an ancient tradition. It has many different types. It is considered as an important element of our culture. It is a best way to express feelings of love, pain,anxiety and suffocation.
A poet interprets his inner feelings and condition through his words.

تو نہیں تو اب  فکر کیسی 

تو نہیں تو اب  فکر کیسی 
دکھ ہے  کیسا ,  اب درد کیسا 
ہجر کیسا , وصل کیسا 
تو نہیں تو بے قراری کیسی 
قرار کیسا  , عروج کیسا , زوال کیسا 
ہے صبح کیسی  ,  اور شام کیسی 
تو نہیں تو بہار کیسی , خزاں کیسی 
تو نہیں تو یہ شباب کیسا  
جینا میرا ہے اب عذاب جیسا 
یہ دریچے اُداس ہوں تو ہوا کریں
یہ سونا آنگن ,  یہ پیڑ پودے 
کھلتے ہیں تو کِھلا کریں 
اب ان موسموں سے لگاٶ کیسا 
وہرانیاں سی ویرانیاں ہیں 
عجب سی یہ خموشیاں  ہیں 
تنہاٸیوں سے بھرا ہے جیون 
اب دل میں اُٹھتا ہے شور کیسا 
سوال کیسا , جواب کیسا 
یہ جو اُفق پہ ہیں چاند تارے 
سوال کرتے ہیں اب مجھ سے 
کرتے ہیں تو کِیا کریں اب 
مجھے فکر کیسی , ملال کیسا 
تو جو نہیں تو فکر کیسی 
دکھ ہے کیسا , درد کیسا  
یہ جو چہرے پہ ہے چھاٸی زردی 
کوٸی جو پوچھے گا گر مجھ سے 
تو صاف کہہ دوں گی اب میں 
جینا ہے اب عذاب جیسا 
زندگی کی رمق باقی نہیں اب 
تو لوٹ کر اب آبھی جاٸے 
تو محبت کیسی یہ پیار کیسا 
ستمگر نے جو ستم کٸیے ہیں 
اب  ہے پوچھتا وہ کہ حال کیسا 
تو  نہیں تو اب  فکر کیسی 
دکھ  ہے کیسا ,اب درد کیسا ۔۔۔ 

ازقلم عطیہ رانی

Post a comment

0 Comments