Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Ain Ishq Ast By Mahnoor Malik Upcoming Novel

Ain Ishq Ast By  Mahnoor Malik Upcoming Novel

Ain Ishq Ast By  Mahnoor Malik Upcoming Novel

Kitab Nagri Proudly Presents Ain Ishq Ast Novel 
By  Mahnoor Malik 
Kitab Nagri Special
Posted SooN Only On Kitab Nagri

"ان لوگوں کو مارنے کی اجازت کس نے دی تم سب کو" اس کی دھاڑ پورا جنگل سن سکتا تھا۔۔۔۔۔۔

جنگل کے بیچ و بیچ دو لاشیں پڑیں تھی۔۔۔۔۔۔۔اور ان کو دیکھ کے یوں لگتا تھا جیسے ان کا خون پی لیا گیا ہو۔۔۔۔۔۔۔لٹھے کے مانند سفید اور لکڑی کی طرح خشک لاشیں

"سردار وہ ہمارے گھر تباہ کر رہے ہیں" مقابل نے کمزور سی دلیل پیش کی

"تو کیا تم لوگوں کو مارتے پھرو گے۔۔۔۔۔۔" وہ پھر سے دھاڑا

"مگر سردار۔۔۔۔۔۔۔۔۔" اس سے پہلے کہ مقابل کچھ بولتا سردار کی آگ رنگ آنکھیں دیکھ کر چپ کر گیا۔۔۔۔۔

اس کی آنکھوں میں شعلے بھڑکتے دکھائی دے رہے تھے

"الله نے ہمیں ان سے الگ بنایا ہے تو اس کا یہ مطلب نہیں کہ تم اس بات کا فائدہ اٹھاؤ۔۔۔۔۔۔۔براق سردار ( سردار کے والد) کے وقت میں کسی نے جرأت نہیں کی تھی۔۔۔۔۔۔تو اب یہ دلیری کیسے۔۔۔۔۔۔۔مجھے بابا سے کمزور سمجھ رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔" اس کی سرد آواز پر وہاں موجود مخلوق ٹھٹھر گئ

"سردار یہ آپ کیا کہہ رہے ہیں۔۔۔۔۔۔ہماری مجال ہم سردار کے بارے میں ایسا سوچیں۔۔۔۔۔" ان کے بزرگ نے کہا تو وہ مڑا۔۔۔۔۔

"تو پھر میری حکم عدولی کیوں؟" وہ دھاڑا

"سردار۔۔۔۔۔۔۔۔درختوں پر ہمارا بسیرا ہے۔۔۔۔۔۔۔یہ انسان روز آتے ہیں ہمارے گھروں کو تباہ کر دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔آپ بتائیں یہی سب چلتا رہا تو ہم کہاں جائیں گے۔۔۔۔۔۔ہماری بھی تو اولادیں ہیں" ان میں سے ایک نے ہمت کر کے بولا تو سردار اس کی جانب متوجہ ہوا

" جانتے ہو یہاں کتنی سردی پڑتی ہے۔۔۔۔۔۔یہ انسان اس سردی کو برداشت کرنے کے قابل نہیں۔۔۔۔۔۔۔اس کے لیے لکڑیاں جلاتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔ان کو زندہ رہنے کے لیے ان سب کی ضرورت ہے۔۔۔۔۔۔کیا وہ خود مر جائیں یا اپنے بچوں کو مار دیں۔۔۔۔۔۔ہماری مخلوق انہیں نظر نہیں آتی۔۔۔۔۔۔وہ کیا جانیں کس درخت پر ہم میں سے کسی کا بسیرا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔" اب کے سردار نے آرام سے ان کو سمجھانے کی کوشش کی

"سردار ہم نے کئ بار ان کو اپنی موجودگی کا احساس دلایا ہے مگر پھر بھی وہ درخت کاٹتے باز نہیں آتے" اب کے مقابل کی شکست خوردہ آواز نکلی

"درخت جان سے زیادہ قیمتی نہیں۔۔۔۔۔۔۔درخت پھر سے بن جاۓ گا۔۔۔۔۔۔۔جان واپس نہیں آۓ گی۔۔۔۔۔۔۔" سردار دھاڑا

"سردار۔۔۔۔۔۔۔درخت کاٹنے میں کچھ وقت لگتا ہے جبکہ درخت بننے میں سالوں لگ جاتے ہیں" ان میں سے ایک بزرگ بولا

"لیکن پھر بھی انسانوں کو مارنے کی اجازت نہیں۔۔۔۔۔۔۔یہ کام الله کا ہے۔۔۔۔۔تم یا ہم کون ہوتے ہیں ان سے ان کی سانسیں چھیننے والے۔۔۔۔۔۔ یہ مت بھولو ہمارا قبیلہ انسان دشمن نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔بلکہ انسانوں کو انسان دشمن مخلوق سے بچانے والا قبیلہ ہے۔۔۔۔۔۔۔اب سے ہمارا بسیرا جنگل کی پچھلی طرف ہوگا۔۔۔۔۔۔۔اگلے حصے کے درخت انسانوں کے لیے چھوڑ دو۔۔۔۔۔۔" سردار نے گویا فیصلہ سنایا جس پر سب نے لبیک کہا

Post a comment

3 Comments

  1. Nikl pehli fursat me nikl .. wrna piss jana tu ny apny is bakwas novel sy😠😡

    ReplyDelete
  2. Amazing novel......
    Bilkul alag story hai.....

    ReplyDelete