Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Ahl E Junoon Novel By Kitab Chehra Episode 4

Ahl E Junoon Novel By Kitab Chehra Episode 4

Ahl E Junoon Novel By Kitab Chehra Episode 4

Novel Name : Ahl E Junoon
Writer Name : Kitab Chehra
Category : Kitab Nagri Special

اذلان لکڑی کا بوسیدہ دروازہ دکھیلتا اندر داخل ہوا تھا۔وہ بےساختہ دو قدم پیچھے ہٹی۔۔

"آپ یہاں۔۔"اغمازہ کے جملہ مکمل کرنے سے پہلے ہی اسکا ہاتھ اٹھا تھا اور پوری قوت سے اس کے منہ پر پڑا۔سنعیہ بیگم کے منہ سے بےساختہ چیخ نکلی تھی اور تیزی سے قریب آئیں جبکہ وہ پھٹی پھٹی نگاہوں سے گال پر ہاتھ رکھے اسکی دہکتی نگاہوں میں دیکھ رہی تھی جہاں اس کے لیے صرف حقارت اور نفرت تھی۔

"کون ہو تم۔۔دور ہو میری بیٹی سے۔۔"وہ چیختے ہوئے اسکے سامنے آئیں۔اسی اثناء میں پولیس آفیسر کے ساتھ لیڈیز کونسٹیبل بھی گھر میں داخل ہوئی تھیں۔

"پوچھیں اپنی آوارہ بیٹی سے کہ کون ہوں میں۔۔"اسکی گرجدار آواز گھر کے درودیوار ہلا گئی۔انہوں نے پلٹ کر اغمازہ کو دیکھا جو پتھرائی نظروں سے اس شخص کو دیکھ رہی تھی۔

 Kitab Nagri start a journey for all social media writers to publish their writes.Welcome To All Writers,Test your writing abilities.

They write romantic novels,forced marriage,hero police officer based urdu novel,very romantic urdu novels,full romantic urdu novel,urdu novels,best romantic urdu novels,full hot romantic urdu novels,famous urdu novel,romantic urdu novels list,romantic urdu novels of all times,best urdu romantic novels.
Ahl E Junoon Novel By Kitab Chehra Episode 4  is available here to download in pdf form and online reading.
Click on the link given below to Free download Pdf
Free Download Link
Click on download
give your feedback

ان سب ویب،بلاگ،یوٹیوب چینل اور ایپ والوں کو تنبیہ کی جاتی ہےکہ اس ناول کو چوری کر کے پوسٹ کرنے سے باز رہیں ورنہ ادارہ کتاب نگری اور رائیٹران کے خلاف ہر طرح کی قانونی کاروائی کرنے کے مجاز ہونگے۔

Copyright reserved by Kitab Nagri

ناول پڑھنے کے لیے نیچے دیئے گئےامیجز پرکلک کریں 👇👇👇
























 پچھلی قسط پڑھنے کے لیے نیچے دئیے لنک پر کلک کریں 👇👇👇

ناول پڑھنے کے بعد ویب کومنٹ بوکس میں اپنا تبصرہ پوسٹ کریں اور بتائیے آپ کو ناول

 کیسا لگا ۔ شکریہ

Post a Comment

0 Comments