Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Zindagi by Robina ShaheeN

Zindagi by Robina ShaheeN

Zindagi by Robina ShaheeN

ٹھوکر مار گرا دیا۔ہاتھ بڑھایا اٹھا دیئے گئے
سنبھل بھی نہ پائے تھےکہ پھر گرا دیئے گئے
جھانسوں پہ جھانسے کھا کے جیئے گئے۔۔۔۔۔۔
ہائے زندگی ! روگ لگا کے جیئے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ بدلہ تھا نہ بدلے گا وہ ظالم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تاعمر بس یوں ہی راگ آلاپتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیواروں سے سر ٹکرانے سے کیا حاصل
ہیرا سمجھ کے پتھر کو تراشتے رہے۔۔۔۔۔۔۔
منافقت کے لبادے میں چھپا تھا وہ ظالم
اک عمر لگی اسی کو پہچانتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسا ستم ڈھایا ۔اپنا بن کےلوٹا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم غیروں میں دشمن کو تلا شتے رہے۔۔۔۔
میری حالتِ زار شکستگی کا اک روپ ہے
خود کو فاتح جان کر وہ مسکراتے رہے۔۔۔۔
میری ہر چوٹ پر تسکینِ قلب پائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ قدم بہ قدم سنگ اپنے چلتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔
حوصلہ نہ تھا ان میں ترکِ تعلق کا۔۔۔۔۔۔۔۔
پتھر مار کے بھی زنجیروں میں جکڑتے رہے
محبت بھی آزمائی۔بغاوت کر کے بھی دیکھا
نہ ہٹ سکا۔نہ ہٹا سکے۔اپنی ڈگر پہ چلتے رہے
بدن بھی چور چورتھا۔قدم بھی آبلہ پا بن گئے
دکھا کر زخم انکو ہم۔سِل کو موم کرتے رہے
اس کے عیبوں کی پردہ پوشی کو شیوہ بنایا ہم نے
گلی گلی کوچہ کوچہ وہ ہمیں رسوا کرتے رہے
بہت ڈھونڈا اس کو گئے دنوں کی جوانی میں
بعد الموت۔وفاؤں کی یاد میں لمحہ بھر روتے رہے
وہ بے وفا نکلے قسمت تھی بینا یا فطرت ان کی
اسی قیاس آرائی میں زندگی بتاتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو آنسو گرا کر۔اپنی ڈگر کو دہرانے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گیلی قبر کو ۔سہرے کے پھولوں سے سجاتے رہے    

روبینہ رضا




Post a Comment

0 Comments