Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Salgirah by Sofia Mehar

Salgirah by Sofia Mehar

Salgirah by Sofia Mehar

" سالگرہ"

تمہیں پتہ ہے ۔۔۔۔؟
ہر سال تیری سالگرہ کے موقع پر ۔۔۔۔
یہ دل ہزاروں خواب ۔۔۔
آنکھوں میں سجا کر ۔۔۔
تیرے سنگ ، تیرے ہاتھوں میں ہاتھ دے کر ۔۔۔
کیک کاٹنے ۔۔
اور پھر ۔۔
اس کیک کو تیرے مسکراتے ہوئے ۔۔۔
چہرہ پر لگانے کو ۔۔۔۔
پھر ایک غبارہ  تیرے ہاتھ ۔۔۔
میں دے کر ۔۔۔۔
اس دل کا حال آنکھوں میں سمو کر ۔۔
تیرے لیے چاند تارے ۔۔۔۔
دنیا کی ہر خوشی ۔۔۔
تیرے قدموں میں رکھنے کو ۔۔ .
یہ دل ترستا ہے ۔۔۔۔
ہزاروں خواب بنتا ہے ۔۔۔۔
مگر جب خواب ٹوٹتا ہے ۔۔۔
پھر یاد آتا ہے ۔۔۔۔
نہ تم پاس ہو ۔۔۔۔
نہ ہی سالگرہ کا کوئی کیک ۔۔۔
پھر میں ایک کام کرتی ہوں ۔۔۔
اک بھیگی ہوئی شام تیرے نام کرتی ہوں ۔۔ .
کیک منگوا کر ۔۔۔
تصور میں ہی ۔۔۔
بھیگی آنکھوں سے تیری تصویر کے ساتھ ۔۔۔
تیری سالگرہ منا لیتی ہوں ۔۔۔۔
پھر رب سے یہ دعا کرتی ہوں ۔۔۔
تو خوش رہے ۔۔۔
تو آباد رہے ۔۔
تیری زندگی میں ہر طرف ۔۔۔
بہار رہے ۔۔۔۔
نہ آئے اک پل بھی دکھ کا ۔۔۔۔
صوفیہ رب کی ذات تجھے اس قدر خوشیاں عطا کرے ۔۔۔
صوفیہ مہر



Post a comment

0 Comments