Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Jhalk E Nafrat Romantic Novel By Zeenaya Writes

Jhalk E Nafrat Romantic Novel By Zeenaya Writes

Jhalk E Nafrat Romantic Novel By Zeenaya Writes

Novel Name : Jhalk E Nafrat
Writer Name: Zeenaiya Writes
Category : ROMANTIC NOVELS,

تم نے میری گڑیا توڑی ہے نا۔۔ میں بھی تمہاری چیزیں توڑ دوں گی۔۔

میں نے تمہاری گڑیا نہیں توڑی، وہ پہلے سے ہی ٹوٹی ہوٸی تھی اور وہ گڑیا بھی بلکل تمہاری طرح گندی ہے۔۔

بہت بدتمیز ہو تم۔۔۔ میں تمہاری کار بھی توڑ دوں گی۔۔۔ ماہ رخ نے عثمان کی کار کو اٹھایا اور اسے زور سے زمین پر پٹخ دیا اور وہ ٹوٹ گٸی۔

تم نے میری کار کیوں توڑ دی۔۔۔ میں تمہیں چھوڑوں گا نہیں۔۔

اور تم نے میری گڑیا توڑ دی۔۔ میں تمہارا تاٸی جان کو بتاٶں گی۔ بدتمیز نہ ہو تو!!

میں بدتمیز نہیں ہوں، تم بدتمیز ہو۔۔۔۔ عثمان نے غصہ ہوتے ہوۓ ماہ رخ سے کہا۔

میں نہیں ہوں، تم ہو۔۔۔

تم ہو!!!

ماہ رخ اور عثمان کی آواز سنتے ہی فریدا کمرے میں گٸی۔ دونوں لڑ کیوں رہے ہو؟؟

چچی!! ماہ رخ نے میری کار توڑ دی ہے۔

نہیں امی جان، عثمان نے میری گڑیا توڑ دی۔

ماہ رخ کتنی بار کہا ہے کہ عثمان بھاٸی کہتے ہیں۔ بڑے ہیں وہ تم سے اور میں نے کہا تھا نا کہ بابا نٸی لادیں گے۔۔ معافی مانگو عثمان سے۔

Kitab Nagri start a journey for all social media writers to publish their writes.Welcome To All Writers,Test your writing abilities.
They write romantic novels,forced marriage,hero police officer based urdu novel,very romantic urdu novels,full romantic urdu novel,urdu novels,best romantic urdu novels,full hot romantic urdu novels,famous urdu novel,romantic urdu novels list,romantic urdu novels of all times,best urdu romantic novels.
Jhalk E Nafrat Romantic Novel By Zeenaya Writes is available here to download in pdf form and online reading.
Click on the link given below to Free download Pdf
Free Download Link
Click on download
give your feedback

ناول پڑھنے کے لیے نیچے دیئے گئے ڈاؤن لوڈ کے بٹن پرکلک کریں
 اورناول کا پی ڈی ایف ڈاؤن لوڈ کریں  👇👇👇
 


Direct Link


Free MF Download Link

FoR Online Read

ناول پڑھنے کے بعد ویب کومنٹ بوکس میں اپنا تبصرہ پوسٹ کریں اور بتائیے آپ کو ناول کیسا لگا ۔ شکریہ

Post a Comment

0 Comments