Breaking News

6/recent/ticker-posts

Header Ads Widget

Ye kesa door aaya hai by Rakhshanda Rafeeq

Ye kesa door aaya hai by Rakhshanda Rafeeq

Ye kesa door aaya hai by Rakhshanda Rafeeq

سنو یہ کیسا دور أیا ہے
ہر طرف موت کا خوف چھایا ہے
ڈرتا نہ تھا پہلے خدا سے
ڈررہا ہے انسان أج انسان سے
نہ تھی پہچان انسان کو انسان کی
کررہا ہے انسان أج پہچان خدا کی
ہوگیا تھا غافل یاد الٰہی سے
ہورہا  آج ہر طرف چرچا خداٸی کا
حاٸل تھا ترقی میں کل تک
سنو وہ تھا پردہ عورت کا
ڈررہا ہے موت سے آج انسان
کررہاہے دیکھو آج مرد سے مرد پردہ
دیکھ لی خدا تیری خداٸی
بس توہی یکتا ۔تو ہی والی
اک تیری ہی ذات نرالی
بچا لے ہم کو اس عذاب سے
گنہ گار سہی سیہ کار ہی  سہی
ہم بندے تو تیرے ہی ہیں یا الٰہی
بچالے۔۔۔ہم کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھپالے اپنی رحمت میں
بچا لے اس زحمت سے۔۔۔۔۔
بچا لے۔۔مولا۔۔۔بچا لے۔۔۔۔۔



Post a Comment

0 Comments